خاور کہوں کہ بدر منوّر کہوں تجھے

خاور کہوں کہ بدر منوّر کہوں تجھے!
محشر کہوں کہ داوے محشر کہوں تجھے!
اے مظہر جمال خدا سیّد البشر ﷺ
حسن مثال کا میں محور کہوں تجھے
سلطان انبیاء ہے تری ذات با صفا
اوّل کہوں یا اوسط و آخر کہوں تجھے
تجھ پرہوئي ہے ختم نبوّت کی داستاں
خاتم پیمبروں کا پیمبر کہوں تجھے
تھا سینہ صدف میں خدا کنز مخفیا
تخلیق کائنات کا گوہر کہوں تجھے
بے مثل و بے مثال ہے دو دلرباۓ حق
رعنائی خیال کا پیکر کہوں تجھے
آئینہ جمال اول ذات مصطفے ﷺ
تو عین ذات حق ہے یہ کیونکر کہوں تجھے
موج خرام ناز ہے نو ساحل مراد
دریاۓ معرفت کا شناور کہوں تجھے
قندیل بزم علم و عمل آپ ﷺ کا وجود
ہر آگہی کا مرکز و مصدر کہوں تجھے
بندہ نواز تجھ کو کہوں یا کہوں بشر
تقویم حسن و عشق کا مظہر کہوں تجھے
در یتیم و امّی لقب صاحب الجمال
میں تاجور کہوں کہ سنخور کہوں تجھے
ہے ذات کبریا بھی ثناء خوان مصطفے ﷺ
منزل کہوں کہ حق کا مسافر کہوں تجھے
ہر ذرّے کی زباں سے آتی ہے یہ صدا
کوئي نہیں کہ جس کا برابر کہوں تجھے
واصف کی کیا مجال کہے اس زبان سے
اللہ کی زبان ہو دلبر کہوں تجھے

Print Friendly, PDF & Email

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*