یاد میں جس کی نہیں ہوش تن و جاں ہم کو

یاد میں جس کی نہیں ہوش تن و جاں ہم کو
پھر دکھادے وہ رخ اے مہر فروزاں ہم کو
دیر سے آپ میں آنا نہیں ملتا ہے ہمیں
کیا ہی خود رفتہ کیا جلوۂ جاناں ہم کو
جس تبسم نے گلستاں پہ گرائی بجلی
پھر دکھا دے وہ ادائے گلِ خنداں ہم کو
کاش آویزۂ قندیل مدینہ ہو وہ دل
جس کی سوزش نے کیا رشکِ چراغاں ہم کو
عرش جس خوبی رفتار کا پامال ہوا
دو قدم چل کے دکھا سرو خراماں ہم کو
شمع طیبہ سے میں پروانہ رہوں کب تک دور
ہاں جلا دے شررِ آتشِ پنہاں ہم کو
خوف ہے سمع خراشیِ سگِ طیبہ کا
ورنہ کیا یاد نہیں نالۂ و افغاں ہم کو
خاک ہو جائیں درِ پاک پہ حسرت مٹ جائے
یا الہٰی نہ پھرا بے سروساماں ہم کو
تنگ آئے ہیں دو عالم تری بیتابی سے
چین لینے دے تپِ سینۂ سوزاں ہم کو
پاؤں غربال ہوئے راہِ مدینہ نہ ملی
اے جنوں اب تو ملے رخصتِ زنداں ہم کو
میرے ہر زخمِ جگر سے یہ نکلتی ہے صدا
اے ملیحِ عربی کر دے نمک داں ہم کو
سیر گلشن سے اسیرانِ قفس کو کیا کام
نہ دے تکلیفِ چمن بلبلِ بستاں ہم کو
جب سے آنکھوں میں سمائی ہے مدینہ کی بہار
نظر آتے ہیں خزاں دیدہ گلستاں ہم کو
گر لب پاک سے اقرارِ شفاعت ہو جائے
یوں نہ بے چین رکھے جو شش عصیاں ہم کو
نیر حشر نے اِک آگ لگا رکھی ہے
تیز ہے دھوپ ملے سایۂ داماں ہم کو
رحم فرمائیے یا شاہ کہ اب تاب نہیں
تابکے خون رُلائے غم ہجراں ہم کو
چاک داماں میں نہ تھک جائیو اے دستِ جنوں
پرزے کرتا ہے ابھی حبیب و گریباں ہم کو
پردہ اُس چہرۂ انور سے اٹھا کر اک بار
اپنا آئینہ بنا اے مہِ تاباں ہم کو
اے رضاؔ وصف رُخِ پاک سنانے کے لئے
نذر دیتے ہیں چمن مرغ غزل خواں ہم کو
٭٭٭

Print Friendly, PDF & Email

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

*